75

اسوٹ

نعمت اللہ ہروی نے اس قبیلے کا شجرہ نسب اسوٹ بن ہنی بن دانی بن غڑغشت بن قیس عبدالرشید دیا ہے ۔

آریاؤں کی آمد کے وقت دریائے کنارا کی وادی میں اسپاسی قوم آباد تھی اور اسپ اس قبیلے کا ٹوٹم تھا ۔ قریب قریب اسی نام کی ایک اور قوم اسوکا وادی سوات میں رہتی تھی ۔ یہ یا تو وادی سندھ کے قدیم باشندے تھے یا دوغلے تھے ۔ کیوں کہ مہابھارت میں ان کو بڑی حقارت سے جنگلی اور وحشی کہا گیا ہے ۔سیتھیوں کے ایک قوم اسو یا آسی تھی وہ سورج کے علاوہ اس گھوڑے کی پوجا کرتے تھے جو سورج کے نام پر قربان کیا جاتا تھا ۔ گھوڑے کو فارسی میں اسپ ، سنسکرت میں اشو ، اوستا اور پشتو میں اسپو کہتے ہیں ۔ اس سے صاف ظاہر کہ اسوٹ اسی اسو قوم کی باقیات ہیں اور ان کا تعلق قدیم زمانے کی ان قوموں سے جو گھوڑے کی پوجا اور قربانی کرتی تھیں ۔ پٹھانو ں کے شجرہ نسب میں بہت سے ایسے نام ہیں جو کلمہ اسو ، اسپا اور اشو سے بنے ہیں اور ان کا تعلق بھی ان ہی قدیم اقوام سے ہے ۔ 

پشتو میں عموماً دو یا سہ حروفی کلمہ میں آخر حروف پر ذور ڈالا جاتا ہے جس سے ایک حروف کا اضافہ ہوجاتا ہے ۔ اس طرح یہ کلمہ اسو سے اسوٹ بن گیا جس کو وہ اپنا جد امجد کہتے ہیں لیکن اس کی حقیقت کو یہ بھول گئے ۔

تہذیب و تدوین
عبدالمعین انصاری

اس تحریر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں