116

خٹک

نعمت اللہ ہروی نے اس قبیلہ کا شجرہ نسب اس طرح درج کیا ہے کہ خٹک بن کودی بن کڑلان ۔ شیر محمد گنڈا پور نے اس کا شجرہ نسب اس طرح دیا ہے کہ لقمان عرف خٹک بن برہان بن کڑلان ۔

ہند آریائی میں تکشک ناگ کو کہتے ہیں ۔ برصغیر میں آباد بہت سی اقوام کا دعویٰ ہے کہ وہ ٹاک یا تکشک کی نسل سے ہیں اور بہت سے افغان قبائیل کا تعلق بھی اسی نسلی گروہ سے ہے ۔

  کلمہ خٹک دوحصوں پر مشتمل ہے ۔ خہ+ٹک = خٹک ۔ پشتو کی مشرقی بولی میں اثباتی یا تعائیدی کلمہ ہے اور ٹک کے معنی سانپ کے ہیں اس طرح خٹک کے معنی ہاں یہ سانپ کی نسل سے ہیں یا ہاں یہ سانپوں کی قوم ہے ۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے یہ نام انہیں دوسرے نسلی گروہوں نے دیا ہے جو اس علاقے آباد تھے اور جانتے تھے کہ یہ ٹاگ کی نسل سے ہیں اور یہ بعد میں ان کا یہ القاب مستقل نام پڑھ گیا اور لوگ نے ان کی نسلی حقیقت کوبھول گئے اور یہ نام ان کے شجرہ نسب میں جد امجد کی حثیت سے درج کرلیا گیا ۔    

قابل ذکر بات یہ ہے کہ اس قبیلے کے شجرہ نسب میں خٹک کے لڑکے کا نام ٹورامن تھا جو کہ ہنوںکے مقامی بادشاہ کا نام ہے ۔ اگرچہ اس سے لازم نہیں آتا ہے کہ خٹکوں کا ہنوںسے کوئی نسلی تعلق ہے ۔ تاہم یہ نام جو کہ روایات میں محفوظ ہے اور ہم افغانوں کے قبائیلی الحاق کے طریقہ کار کو دیکھیں تو کہہ سکتے ہیں کہ اس قبیلہ میں کسی گروہ کا تعلق ہنوں ہو ۔  

تہذیب و تدوین
عبدالمعین انصاری

اس تحریر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں