84

نراد

ہندو دیومالائی کردار 
برہما کے دس روحانی بیٹوں رشیوں یا پرجاتیوں میں سے ایک ویدوں کے مطابق نراد یہاں وہاں اور ہر کہیں ہے ۔ ہندو باطنیت میں نراد کا مقام کچھ بھی رہا ہو نراد کرم اور آدمی بدھ کے کائناتی فیصلوں کا رازداں اور انہیں نافذ کرنے والا ہے ۔ یوں نراد کو لاذوال فعالیت اور نت نئی تجسیم لینے کی علامت کے طور پر کہا جاسکتا ہے ۔ انسانی کلپ کے آغاز سے اختتام تک وہ سارے انسانی معاملات کو دیکھتا ہے اور ان کی رہنمائی کرتا ہے ، یوں وہ سری رہنما قوت ہے جو کائناتی ادوار ، کلپوں اور واقعات کو مہیج اور قابو میں رکھتی ہے ، عمومی پیمانے پر واضع طور پر کرموں کے حساب کتاب کا پیمانہ مہیا کرتا ہے ۔ اس منومتر میں تمام پیرؤں کو وہی تحریک دیتا اور ان کی رہنمائی کرتا ہے ۔ ہندوؤں معبووؤں میں سے نراد انہی کی فکری اشارات اور قلوب کی سختی سے ترغیب کرتا نظر آتا ہے ۔ جنہیں بالاخر اس کے آلہ کار اور شکار بنتا ہے ۔ نراد یہ عمل کسی اظہار برتری یا خود کو معبود منوانے کے نہیں کرتا ہے بلکہ وہ کائناتی ترقی اور ارتقاء کو مخصوص حدود کے اندر رکھنا چاہتا ہے ۔ ہماری ترقی اور قومی تفاخر یا بین الاقوامی دشمنی کو اس کے دائرہ کار میں آتی ہے ۔ وہ جنگیں شروع کرواتا اور انہیں روکتا ہے ۔  

تہذیب و تدوین
عبدلمعین انصاری

اس تحریر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں