31

وید کی دیویاں

پڑھنے والے یہ ضرور محسوس کیا ہوگا کہ اناثی عنصر ویدک دیو مالا سے بالکل مفقود معلوم ہوتا ہے ۔ خصوصاً رگ وید سے جس میں صرف ایک بڑی دیوی اُشاس (سپید صبح) ہے جس کی ہستی اور فرائض دوسرے دیوتاؤں سے بالکل جدا ہیں ۔ سراما اور سرائیوں دیویاں نہیں اور محدود کار انجام دیتی ۔ دیوتاؤں کی بیویوں (دیو پتنیاں) کا مجموعی طور پر مبہم ذکر آیا ہے ۔ مگر اکثر بھوتوں کی بیویاں (داس پتیاں) بھی بن جاتی ہیں ۔ کیوں کہ ان سے مراد پانی یا گائے سے ہے ۔ جن کے لیے ہمیشہ لڑائیاں ہوتی ہیں اور جو کبھی گرفتار ہوتی ہیں اور کبھی رہا ہوتی ہیں ۔ مگر کبھی ان بیویوں کا ذکر علحیدہ بھی آیا تو ان کے شوہر کے نام میں علامت تانیث لگانے سے بن جاتا ہے ۔ مثلا وارود نانی ، اندرانی ، اگنائی اور اشونی وغیرہ ہیں ۔ مگر حقیقت میں ان کو اپنے شوہروں کا عکس یا سایہ کہنا چاہیے ۔ بعد کی بعض کتابوں میں ان دیوتاؤں کی پتنیوں کے نام آئے ہیں ۔ مثلاً دتین سوتر میں ان دیوتاؤں کے نام درجہ ہیں ۔ اگنی کی بیوی پرتھوی ۔ واٹ کی بیوی واک ۔ اندر کی بیوی سینا ، برہسپتی کی بیوی دہنیار ، پوشن کی بیوی پتھبیا ، وسو کی بیوی گاتری ، رودر کی بیوی تشتبہ ، ادیتہ کی بیوی جگتی ، منتر کی بیوی انوشتبہ ۔ وارن کی بیوی وراک سوشنوکی بیوی پنگتی ۔ سوم کی بیوی دکھشتا ۔

تہذیب و تدوین
ّْْ(عبدالمعین انصاری)

اس تحریر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں