81

پنی

مخزن افغانی میں ہے پنی بن دانی بن غور غشت بن قیس عبدالرشید ہے ۔ یہ کلمہ پانی اور پنڑی بھی بولاجاتا ہے ۔ پنی ایک خانہ بدوش قبیلہ ہے ۔ افغان خانہ بدوش قبائیل پانڈے کہلاتے ہیں ۔ جس کا پشتو تلفظ پونڈے ہے ۔ بیلو کے نذدیک پاوندہ یا پوندہ فارسی کلمہ فارسی مصدر پویدن مشتق ہے ۔ جس کے معنی سیر و گشت کرنا یا پھر پشتو فعل پودوں سے نکلا ہے ۔ جس کا مطلب ریوڑ کو چراگاہوں کی تلاش میں ایک جگہ سے دوسری جگہ پھر کر چرانا ۔ معاملہ فہم پاوندے مواخر الذکر تشریح سے متفق ہیں ۔

سنسکرت کے قدیم ماہر لسانیات پنی یا پانی اور پن جلی جو اس کلمہ قریب المقرج ہیں اس لیے یہ دعویٰ کیا گیا کہ یہ پٹھان ہیں ۔ مہابھارت کے پانچ بھائی غالباً در بدر پھر نے کی وجہ سے پاندے یا پانڈو کہلاتے تھے ۔ اس طرح ممکن ہے یہ کلمہ اوستائی کلمہ پاوندگان یعنی پیدل کی شکل ہو اور غالباً اس کی کی اصل پال یا پالی ہے ۔ جانوروں کو چرانے کو راجپوتوں میں یہ مقدس فعل سمجھا جاتا ہے ۔  یہ قدیم قوموں میں بھی یہ مقدس پیشہ سمجھا جاتا تھا ۔ یسعیا بنی نے کہا تھا کہ ’خداوند قدوس خورس کے حق میں کہتا ہے وہ میرا چرواہا ہے ‘۔ راجپوتوں پال نام عام ہے اور پال خاندان راجپوتوں کے چھتیس راج کلی میں شامل ہے ۔ افغانستان پر برہمن شاہی خاندان نے طویل عرصہ تک حکومت کی ہے ان کے راجاؤں کے نام میں پال کلمہ شامل ہوتا تھا ۔

بالاالذکر بحث سے یہ نتیجہ اخذ کیا جاسکتا ہے کہ اوستا کا کلمہ پاوندگان ، پونڈے ، پانڈے پال ، پالی ، پانی ، پنی سب ہم معنی لفظ ہیں جس کے معنی در بدر پھرنے کے ہیں اور کلمات کو آریائی قوموں نے استعمال کیا ہے ۔ لہذا ان کو پانی یا پنی اس لئے کہتے ہیں کہ یہ دربدر پھرتے تھے ۔ جس کو انہوں بعد میں اپنا جد امجد تسلیم کرتے ہوئے شجرہ نسب میں شامل کیا ہے ۔

تہذیب و تدوین
عبدالمعین انصاری

اس تحریر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں