134

کونبھی یا کورمی

جنوب ہند میں کونبھی یا کورمی بڑی تعداد میں آباد ہیں ۔ گو ان کا کہنا ہے کہ یہ راجپوت ہیں مگر انہیں پست سمجھا جاتا ہے ۔ یہ زراعت پیشہ ہیں اور انہیں باغبانی زیادہ پسند ہے ۔ حقیقت میں ان کا خاص پیشہ باغبانی ہے ۔ یہ جبل پور اور ساگر کی طرف کثرت سے آباد ہیں ۔ مالوہ کے علاقہ میں دریائے نربدہ کے دونوں کناروں کے پر ان کے علاوہ لودہا قبیلہ آباد ہے ۔ راجپوتانہ میں ایک قبیلہ پتل آباد ہے اور شاید یہ بھی کورمی ہیں ۔ گجرات کے علاقہ میں کونبھی کثیر تعداد میں آباد ہیں ۔ اس علاوہ مرہٹوں کے علاقہ میں بلکہ بدریا تا گوداوری کے علاقہ میں یہ آباد ہیں ۔ ہندوستان میں حسن صورت اور قد قامت میں برہمن راجپوتوں سے کم ہیں اور یہ یقینا آریہ ہیں ۔ اکثر لوگ حیرت کرتے ہیں کہ  کونبھی مسقل مزاج کاشتکار ہیں اور یہ کس طرح اچھے سپاہی اور قزاق بن گئے ۔

شیوا جی اور اس کے سردار اور سپاہی کونبھی تھے اور ستارہ کے علاقہ سے آئے جہاں ایک قدیم قبیلہ  مہار جو بڑے قزاق ہیں ان کے ساتھ مخلوط ہوگئے ہیں ۔ اگرچہ تمام مرہٹہ سردار کونبھی نہیں تھے ۔ ہلکر گھوسی تھا ، گائکوار گوالا اور یہ تمام سردار اور کونبھی قبیلہ ناخواندہ تھے ۔ اس لیے ان کی مملکت کے کار ہمیشہ برہمنوں کے ہاتھ میں رہا اور بعد میں جب کہ مرہٹوں کی حکومت قائم ہوگئی تو سبھی بدمعاش ، ڈاکو ، خانہ بدوش اور مسلمان بھی ان کی نوکری کرنے لگے ۔

تہذیب و تدوین
عبدالمعین انصاری

اس تحریر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں