95

بلوچوں کی آبادیاں ، زبان و لہجے

بلوچستان کے علاوہ بلوچ ایران میں کرامان ، افغانستان میں سیستان میں دریائے ہلمند کے کنارے ان کی آبادیاں ہیں ۔ لیکن بلوچستان میں بختون علاقہ میں ان کی آبادی نہ ہونے کے برابر ہے ۔ اگرچہ سندھ میں ہر جگہ ہی ان کی آبادیاں ہیں لیکن کراچی میں ان کی بڑی تعداد کے علاوہ سندھ کے شمالی علاقہ میں ان کی کثیر تعداد آباد ہے ۔

پنجاب مین ان کی کثیر تعداد سرائیکی علاقہ سے دریائے سندھ کے کنارے ان کی آبادیاں ہیں ۔ ان کی آبادیاں سرائیکی علاقہ سے تک اور لاہور سے دریائے جہلم کے کنارے تک ان کی آبادیاں ملتی ہیں ۔

بلوچ دریائے سندھ کے کنارے حیدرآباد تک اور سرائیکی علاقہ میں سرائیکی بولتے ہیں ۔ جب کہ پنجاب شمال مشرقی علاقہ میں ان کی زبان سرائیکی ہے ۔

سندھ میں ٹھٹھہ اور سندھ کے ساحلی علاقہ اور کراچی میں یہ بلوچی میں یہ عموماً لاسی ، جگدالی اور سندھی بولتے ہیں ۔ مگر جب شمالی جانب جیسے جیسے بلوچستان کے قریب جائیں گے وہاں عموماً بلوچی بولتے ہیں ۔

مشرقی بلوچستان میں بلوچی کا مشرقی لہجہ استعمال ہوتا ہے اور مغربی بلوچستان اور ایرانی بلوچستان میں مغربی بلوچی یا مکرانی بولی جاتی ہے ۔ اس کے علاوہ بھی اس زبان کے کئی لہجے ہیں ۔ مثلاً رخشانی وغیرہ ۔

بلوچستان کے علاوہ سندھ اور پنجاب جہاں ان کے سیکڑوں قبیلے آباد ہیں ان میں اور مقامی باشندوں میں کوئی خاص فرق نہیں ہے ۔ ان اور دوسرے لوگوں میں کوئی فرق نہیں ہے ۔ ان کا رہن سہن لبادہ مقامی لوگوں کی طرح ہے ۔ اس طرح مشرقی بلوچستان ، سندھ اور پنجاب میں آباد بشتر قبائل ایسے ہیں جن کا مغربی بلوچستان میں کوئی آثار نہیں ہیں اگرچہ چوالیس پاڑوں میں ان کا نام ہے ۔ اہم بات یہ کئی قبائل ایرانی بلوچستان میں بھی آباد ہیں ، مثلاً لاشاری ۔ اس طرح مزاری ، لغاری وغیرہ جن کا شمار بلوچوں کے بڑے قبیلوں میں ہوتا ہے مغربی بلوچستان میں نہیں پائے جاتے ہیں ۔

تہذیب و ترتیب

(عبدالمعین انصاری)

اس تحریر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں