41

بلوچوں کی نقل مکانی

بلوچ قبائل بلوچستان ، سندھ اور پنجاب کی طرف نقل مکانی کرنے سے پہلے کرامان ، ایرانی بلوچستان اور مکران میں آباد تھے ۔ یہ ان قبائل کے ناموں سے عیاں ہے ۔ بگٹی ایرانی بلوچستان کے علاقہ بگٹ ، بلیدی مکران کی وادی بلیدہ سے ، لاشار کا تعلق لاشار ایرانی بلوچستان سے ، گشگوری وادی گشگور میں سے ، کلانچی کلانچ سے اور مگسیوں کا مگس سے جو ایرانی بلوچستان میں واقع ہے ۔

جو شواہد اور منابع ہماری دسترس میں ہیں کہ وہ ہ میں بلوچوں کی نقل مکانی کے بارے میں کوئی خاص اور معین معلومات نہیں دے سکتے ہیں کہ انہوں نے کس وقت ایران کے شمال سے جنوب کی طرف فارس اور کرامان کےلیے نقل مکانی شروع کی ۔ ہیوز اس نقل مکانی کے وقت کو چھٹی صدی عیسویں کے اوخر اور ساتویں صدی عیسویں کے اوائل میں گردانتا ہے ۔ ڈیمز اس سوال کا جواب کہ بلوچوں نے کب ہجرت کی کوئی قطعی جواب نہیں دیتا ہے ۔ بلکہ پانچویں صدی عیسویں کے دوسرے نصف کو سفید ہنوں کے ایران پر حملوں کو اس کا سبب بتاتا ہے ۔ ان حملوں کی وجہ سے بلوچ جنوبی حصوں کی طرف ہجرت کرنے پر مجبور ہوگئے ۔

پیکولین کا کہنا ہے کہ بلوچوں کی آبادی بڑھنے کی وجہ سے چراگاہیں ( جو کہ مویشی پالنے کےلیے بنیادی شرط ہوتی ہے) کم پڑھ گئیں اور اس وجہ سے دسویں صدی عیسویں کے اوائل میں کرمان سے مشرقی جانب سیستان تک اور پھر شمال کی جانب کراسان تک بلوچ قبائل کچھ حصوں سے پہلے نقل مکانی شروع ہوئی ۔

ایم ورتھ لانگ کا کہنا ہے کہ سیستان اور مغربی مکران میں ان کی نقل و حرکت (سلجوقی حملہ) گیارویں صدی عیسویں کے آخر میں ہوئی اور مشرق کی طرف مزید پیش قدمی چنگیز خانی فتوحات کی وجہ سے ہوئی ۔ بلوچستان اور سیستان میہں زیادہ مدت تک قیام پزیر نہیں ہوئے ۔ جنوب اور جنوب مشرقی جانب سے مغربی ترکوں ، سلجوقیوں کا دباوَ تھا ۔ (بارویں صدی عیسویں )

بلوچوں کو مکران سے شمالی جانب سیوستان (سیوبی) اور قلات کی طرف بڑھنے کے دوران ب سے زیادہ براہویوں کی مزاہمت کا سامنا کرنا پڑا ۔ گمان یہ کہ انہیں اس پر کامیابی نصیب نہیں ہوئی کہ مشرقی بلوچستان کے مرکز میں براہویوں کی اصل زمینوں پر قبضہ کرسکیں ۔ چنانچہ بلوچ اس علاقہ کے مغربی اور مشرقی حصوں سے گزرتے ہوئے قلات ، سیوی اور کیچ اور گندارہ تک نکل گئے ۔ وہاں سے سندھ تک چلے گئے اور جنوب کی طر حیدرآباد اور کراچی میں بس گئے ۔

بلوچ کا بڑا حصہ تیرویں صدی عیسویں تک مکران کے علاقہ میں آباد تھا ۔ ایک حصہ اسی علاقہ میں آباد ہوکر کھتی باڑی کرنے لگا ۔ مگر آباد اراضی اور مناسب چراگاہوں کی کمی اور محدودیت کی وجہ سے بلوچون کے نسبتاً بڑے اور طاقت ور قبائل (مثلاً رند ، مگسی اور گورچانی) وغیرہ نے شمال کی طرف ہجرت جاری رکھی ۔

تہذیب و ترتیب

(عبدالمعین انصاری)

اس تحریر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں